39

علاقائی ترقی و ڈیویلپمنٹ کے لیے چین کا گرانقدر کردار

(خصوصی رپورٹ):۔ اقتصادی مبصرین کا کہنا ہے کہ چین کی ترقی اور استحکام سے علاقائی سطع پر ڈیویلپمینٹ تیزی سے فروغ پا رہی ہے جس سے نہ صرف چین کی شرح نمو بہتر ہو رہی ہے بلکہ خطے کے دیگر ممالک کی شرح نمو اور ڈیویلپمنیٹ تیزی سے استحکام کی جانب گامزن ہے، اقتصادی مبصرین نے واضح کیا ہے کہ چین کے پڑوسی ممالک جن میں ایشیا پیسیفک کے ممالک شامل ہیں چین کی گروتھ اور ڈیویلپمنٹ سے متاثر ہو رہے ہیں اور چینی ڈیویلپمنٹ سے یہ ممالک بھی تیزی سے ڈیویلپمنٹ کی جانب گامزن ہیں،اسطرح چین کا علاقائی سطع پر مثبت کاوشوں اور تعاون سے ایشئین پیسیفک کے ممالک بھی تیزی سے مستحکم ڈیویلپمنٹ حاصل کر رہے ہیں، چینی کاوشوں اور ایشیا پیسیفک ممالک کے لیے چین کی ڈیویلپمنٹ سعی کو اجاگر کرتے ہوئے مبصرین نے کہا کہ رواں ہفتے میں منعقدہ ایشیا پیسیفک اقتصادی تعاون کا سربراہی اجلاس برائے 2018کا ایجنڈا اس حوالے سے سب کے سامنے ہے کیونکہ اس میں چین کے ڈیویلپمنٹ پلان بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام ککے اہداف کو اس فورم میں اجاگر کیا گیا ہے، بیہجنگ میں چین کے ادارہِ برائے بین الاقوامی تعلقات کے ریسرچ فیلو چینگ فیکناگ نے کہا ہے کہ چین اور پاپوا نیوگینا سیاسی اور تجارتی عوامل کے حوالے سے اعتماد کے رشتے میں منسلک ہیں، اور گزشتہ چند سالوں میں چین اور پاپوا نیوگینا کے مابین اقتصادی و تجارتی تعاون، سلکِ روڈ اکنامک بیلٹ اور 21ویں صدی کی میری ٹائم سلک روڈ پروگرام کے باعث چین اور پاپوا نیو گینا کے مابین قومی اور عوامی سطع پر باہمی تعلقات تیزی سے فروغ پا رہے ہیں، اور چین وقتا فوقتا پاپوا نیوگنی کی قیادت کیساتھ باہمی روابط اور تجارتی و اقتصادی تعلقات کے فروغ کے حوالے سے تعاون اور معاہدات کے فروغ کے حوالے سے کوشاں ہے، چین پاپوا نیوگنی کو تجارت و سرمایہ کاری کے علاوہ معدنیات، تعلیم صحت، انفرا سٹرکچر اور روڈ ڈیویلپمنٹ کے حوالے سے تیزی سے سپورٹ کر رہا ہے اور بیشتر بڑے پراجیکٹس چین کے تعاون سے تکمیل کی جانب گامزن ہیں، سوننگ فنانشل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے ریسرچ فیلو جیان ہان نے کہا کہ ایشیا پیسیفک اقتصادی تعاون فورم خطے کے ممالک کے لیے بہت اہمیت کا حامل ہے، اور اس فورم کے انعقاد سے علاقائی سطع پر اقتصادی تعاون اور ڈیوییلپمنٹ کو تیزی سے فروغ حاصل ہوگا، انہوں نے کہا کہ گزشتہ چند سالوں میں چین نے ایشیا پیسیفک ممالک کی ڈیویلپمنٹ اور ترقی کے لیے گرانقدر خدمات سر انجام دیں ہیں اور یہ ممالک تیزی سے چین کی سپورٹ کی بدولت ڈیویلپمنٹ اور معاشی استحکام کی جانب گامزن ہیں، چین دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہونے کے باوجود گزشتہ کئی سالوں سے اقتصادی شرح نمو کو ایک تسلسل کیساتھ برقرار رکھے ہوئے ہے، اور عالمی معیشت کی بحالی اور تنو کے لیے یہ امر بہت اہمیت کا حامل ہے، اور چین کی انہی کوششوں سے عالمی معیشت پیداواری ڈیویلپمنٹ کی جانب گامزن ہو سکتی ہے، پاپوا نیوگنی کے دارلحکومت پورٹ مورس بے میں چین کے تعاون سے ایشیا پیسیفک اقتصادی تعاون فورم کے انعقاد سے قبل کنونشن سینٹر کی تعمیر کی گئی اور بہتر انداز میں روڈ انفراسٹرکچر کی تکمیل یقینی بنائی گئی تاکہ اس فورم کا انعقاد کامیابی سے ہو سکے ان سب عوامل کے حوالے سے چین نے پاپوا نیوگنی کی حکومت کیساتھ بھر پور تعاون کیا ہے، چین اور پاپوا نیوگنی کے مابین باہمی تعلقات اور دو طرفہ عملی تعاون کے حوالے سے عوامل کا آغاز چینی صدر شی جنپگ اور نیوگنی کے وزیر اعظم پیٹر او نیل کے مابین ہونیوالی ملاقات2014میں ہوئی اور دونوں قائدین نے مستقبل میں اسٹرٹیجک تعلقات اور باہمی روابط کے فروغ کے حوالے سے اعتماد سازی کا آغاز کیا، اور اس وقت سے چین اور پاپوا نیو گنی کے مابین دو طرفہ باہمی روابط ڈیویلپمنٹ کے ایک نئے دور میں داخل ہو چکے ہیں، چین کی انٹر نیٹ معیشت بالخصوص موبائل ایپلیکیشنز آج دنیا میں سب سے زیادہ تیزی سے اہمیت اختیار کر رہی ہیں، اور دوسری جانب چین جس طرح سے عالمی معیشت اور عالمی آزادانہ تجارت کے فروغ کے حوالے سے باہمی اور دو طرفہ مفادات کیساتھ آگے بڑھ رہا ہے، یوں چین نے عالمی تجارت کے حوالے سے باہمی مفادات کی صورت ایک نیا ورلڈ آرڈر تجویز کیا ہے تاکہ عالمی تجارت میں سب ممالک کو یکساں انداز میں فاہدہ حاصل ہو سکے، دوسری جانب عالمی تجارت کے حوالے سے چین مینوفیکچرنگ سیکٹر میں سب سے آگے ہے اور عالمی سطع پر Made in Chinaایک فیکٹری کی حیثیت رکھتا ہے اور یہ عالمی فیکٹری جدت پرازی کیساتھ معیار اور کوالٹی سٹینڈرڈز کو مزید تقویت دے رہی ہے، چینی ٹیکنالوجی تزی سے عالمی سطع پر اہمیت حاصل کر رہی ہے، اور حال ہی میں سمندر پر قائم ہانگ کانگ، ژوہائی ۔مکاؤ پل اپنی تعمیری ٹییکنالوجی اور مینو فیکچرنگ کی تکنیک کے حوالے سے تعمیرات کے شعبے میں سب سے آگے نکل چکا ہے، اور اس پل کی تعمیر نے پل انڈسٹری اور کنسٹرکشن سیکٹر میں چین کی قابلیت اور ہنر کو تمام دنیا پر واضح کر دیا ہے، اسی طرح چین کی ہائی اسپیڈ ریلوے جدت پرازی، ٹیکنالوجی اور میعار میں دنیا میں اپنا ثانی نہیں رکھتی، اس طرح عالمی معیشت کے لیے چین کا مستحکم اقتصادی ماحول ایک کلیدی اہمیت رکھتا ہے اور عالمی معیشت کے استحکام کے لیے چین کا موثر اور مستحکم پھیلاؤ ایک مثبت امر ہے، ایشیا پیسیفک اقتصادی تعاون 2014جس جذبے اور اقتصادی ویژن کے تحت کیا گیا تھا وہ ہی جذبہ اور ویژن آج بھی کارفرما ہے۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں